آپ کا مہینہ کیسا گزرے گا؟

کام کی وجہ سے زیادہ ٹینشن مت لیا کریں۔اپنا ٹائم ٹیبل بنائیں،غیر ضروری مصروفیات کو آخر میں رکھیں،اگر وقت بچ جائے توٹھیک ورنہ اپنے کام پر ہی فوکس رکھیں۔یہ کہاں کی دانائی ہے کہ آپ اپنی توانائی اور ٹائم فضول کاموں میں خرچ کر بیٹھیں اور بعد میں پینڈنگ کاموں کا رونا روئیں۔
اگرآپ کا خیال یہ ہے کہ کچھ لوگ آپ کو دل سےپسند نہیں کرتے توکچھ دیر کے لیے خود کو اُن کی جگہ پر رکھ کر سوچیں کہ آپ کا کونسا طرزِعمل ناقابلِ برداشت ہے۔یاد رکھیں کہ دنیا باہمی تعاون کی بنیاد پر چل رہی ہے۔اگر آپ کو اپنا طرزِ عمل بدلنا بھی پڑے تودوسروں کی نظروں میں بلند مقام پانے کے لئے،ایسا کر گزرئیے۔
اگر آپ چاہتے ہیں کہ لوگ آپ کو لیڈر مانیں تو انہیں اپنی شخصیت سے متاثر کریں،ان پر بے جا حکم نہ چلائیں۔اگر آپ انہیں متاثر کرنے میں کامیاب ہو گئے تووہ خود بخود آپ کے حکم کا انتظار کریں گے۔اکثر لوگوں کی یہ فطری خواہش ہوتی ہے کہ وہ کسی سے متاثر ہوں اور پھر اس کے گُن گائیں۔
صبح جلد اٹھنے کی عادت اپنائیں،اُس وقت فضا کائناتی انرجی سےبھرپور ہوتی ہے،ان لمحات میں یہ تصور ذہن میں رکھیں کہ کائناتی انرجی آپ کے جسم میں داخل ہو رہی ہے اور آپ کے جسمانی،روحانی اور نفسیاتی مسائل کو حل کر رہی ہے۔
آپ کو اپنی روزمرہ کی روٹین پرنظرثانی کرنی چاہیے،اگر آپ اپنے ٹائم ٹیبل پر کنٹرول حاصل کر لیں اور موڈ کی غلامی سے نکل آئیں،تو آپ کو بہت سا ایکسٹرا وقت مل سکتا ہے۔اس ایکسٹرا وقت کو آپ کسی تعمیری کام میں صرف کریں توآپ کی زندگی بدل سکتی ہے۔وقت کا بہترین استعمال ،ہر کامیابی کا گُر ہے۔
سانس لیتے وقت پھیپھڑوں کا صرف اوپر والا حصہ استعمال کرنے کی بجائے پورے پھیپھڑے استعمال کرنے کی عادت ڈالیں۔اس سے آپ تروتازہ بھی رہیں گےاورلمبی عمر بھی پائیں گے۔
اپنا مطالعہ وسیع کریں،اچھی کتابوں اور اچھے مضامین سے تعلق جوڑیں،اس سے آپ کو زندگی کے مسائل کو سمجھنے اور انھیں حل کرنے میں مدد ملے گی۔کتاب سے اچھا دوست اور کوئی نہیں ہوتا۔


 
 
 
ہوم پیج دیگر منتخب آرٹیکلز

عمران خان کا بُرج
پورا نام احمد خان نیازی عمران ہے لیکن اتنے طویل نام کے ساتھ چلنا بہت مشکل تھا سو عمران خان سے ہی گزارا کر رہے ہیں۔ انکی شہرت آج کل ساتویں آسمان پہ ہے۔ کوئی بھی دن ایسا نہیں ہوتا جب یہ ہیڈ لائنز میں نظر نہ آئیں۔ انکا کرکٹ کیرئیر شاندار رہا ہے۔ 1992 ء میں عمران خان نے ورلڈ کپ جتوا کرجو تاریخ رقم کی وہ آج تک بےنظیر ہے۔ شوکت خانم میمویل ہسپتال بنا کر خدمت خلق بھی کر رہے ہیں اور سیاسی جماعت بنا کر سیا ست بھی۔
شاندار وجاہت رکھنے والا یہ شخص جوانی سے ہی خواتین سے گھرا رہا ہے۔ عمران خان نے پہلی شادی 1995 ء میں برطانوی صحافی جمائمہ گولڈ سمتھ سے کی۔ 21 سالہ جمائمہ نے محبت میں اسلام بھی قبول کیا لیکن یہ شادی کامیاب نہ ہوئی اور2004 ء میں دونوں کی طلاق ہوگئی۔ انکی ازدواجی زندگی ہمیشہ سے ہی سیاست کی نظر ہوئی کیونکہ ریحام خان کیساتھ دوسری شادی کا انجام بھی طلاق تھا۔ گلالئی نے بھی ان پہ الزام لگائے کہ عمران خان ان سے شادی کرنا چاہتے ہیں لیکن وہ ثابت نہیں ہوئے۔ بہر حال عمران خان اب بشریٰ بی بی سے تیسری شادی بھی کر چکے ہیں۔ انکی اہلیہ ایک نہایت مذہبی خاتون ہیں، بلکہ روحانی شخصیت ہیں۔
سیاست میں عمران خان نےچند برسوں سے تہلکہ مچا رکھا ہے۔ نواز شریف کے خلاف انکے دھرنوں نے پاکستانی سیاست کو ایک نیا رنگ دیا۔ نوجوان نسل نے انکے دھرنوں میں جان ڈال کر انکا خوب ساتھ دیا۔ 2018 ء کے الیکشن میں عمران خان کی پارٹی نے بہت بڑی کامیابی حاصل کی ہے۔ عمران کا کہنا ہے کہ وہ شخصیات کی بجائے اداروں کی مضبوطی کے قائل ہیں۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ عمران خان بطور وزیراعظم عوام کی توقعات پر کیسے پورا اترتے ہیں۔
تاریخ پیدائش اور بُرج
آئیے ذرا عمران خان کی تاریخ پیدائش پر غور کرتے ہیں اور ان کے بُرج کا حال اور ان کی کامیابی کا راز جاننے کی کوشش کرتے ہیں۔
تاریخ پیدائش: 5 اکتوبر 1952 (عمر 65 سال)۔ مقام: لاہور پاکستان
تاریخ پیدائش کے لحاظ سے عمران خان کا بُرج میزان (Libra) ہے۔ بُرج میزان والے لوگ بہت متجسس اور طاقتور ہوتے ہیں جیسا کہ عمران خان اس عمر میں بھی نظر آتے ہیں۔ یہ لوگ کشادہ ذہنیت کے مالک ہوتے ہیں۔ انکی جستجو انہیں نئی نئی کھوجوں کی طرف مائل کرتی ہے جسکی وجہ سے یہ مختلف چیزوں میں گھسے رہتے ہیں۔ ان لوگوں کو دنیا گھومنے اور رنگینیوں میں رہنے کا بہت شوق ہوتا ہے۔ یہ لوگ تبدیلیوں کو بہت پسند کرتے ہیں۔
غور کیا جائے تو یہ تمام خوبیاں عمران خان میں پائی جاتی ہیں۔

 

اورنگزیب عالمگیر کا بُرج
اصل نام محی الدین محمد تھا لیکن اپنی بہادری کیوجہ سے اورنگزیب عالمگیر کے نام سے پکارے جاتے ہیں۔ مغل سلطنت کے یہ آخری بااثر بادشاہ تھے کیونکہ انکے بعد مغل سلطنت زوال کیطرف چل پڑی۔ نہایت بہادرتھے، ایک بار ان پر ہاتھی نے حملہ کردیا، مگر انہوں نے ہاتھی کو بھی ہرا ڈالا۔ 1658 میں اپنے تین بھائیوں کو قتل کرنے اور باپ کو قید کرنے کے بعد سلطنت کے بادشاہ بنے۔ بھائیوں کو اس لیے قتل کیا کہ وہ بھی انہیں قتل کرنے کی تاک میں تھے۔ مضبوط فوج تیار کر کے انھوں نے کئی ریاستوں پر قبضہ کیا۔
اورنگزیب کافی مذہبی بادشاہ تھے انھوں نے بچپن سے ہی قرآن پاک بڑی دلچسپی سے پڑھا۔ انھوں نے اپنے عہد میں گانے اور رقص پر پابندی لگا دی، کسی بھی دوسرے مذہب کو ہر گز برداشت نہیں کرتے تھے۔ ہندؤں کے کئی مندر انھوں نے توڑ ڈالے۔ انھیں بھی محبت نے اپنا قیدی بنا ہی ڈالا یا وہ کسی سازش کا شکار ہوئے۔ کہا جاتا ہے کہ ایک ناچنے گانے والی عورت ہیرا بائی پر اپنا دل ہار بیٹھے۔ اور کہتے ہیں ناں کہ محبت اندھی ہوتی ہے، اورنگزیب پر بھی کچھ ایسا ہی جادو ہوا اور ہیرا بائی کے اصرار پر بادشاہ سلامت شراب کا گھونٹ پی بیٹھے، مگر بعد میں بہت پچھتائے۔ اورنگزیب کبھی بھی فارغ نہیں بیٹھتے تھے، ہر وقت لوگوں کے کام میں لگے رہتے تھے۔ بہت ایکٹیو شخص تھے۔
تاریخ پیدائش اور بُرج
تاریخ پیدائش: 4 نومبر 1618ء۔ مقام: مغل سلطنت
آئیے ذرا اورنگزیب عالمگیر کی تاریخ پیدائش پر غور کرتے ہیں اور ان کی شخصیت کا حال جاننے کی کوشش کرتے ہیں۔
تاریخ پیدائش کے مطابق انکا برج عقرب ہے۔ برج عقرب کے لوگ بہادر اور پر عزم ہوتے ہیں۔ یہ سچے دوست کی طرح ہمیشہ کام آتے ہیں۔ ہر مسئلےکو اپنی صلاحیتوں کی وجہ سے بخوبی حل کر لیتے ہیں۔ لیکن یہ تشدد پسند بھی ہوتے ہیں۔ اپنے راز کو راز رکھنا پسند کرتے ہیں اور غلطی سے اگر کوئی انکے معاملے میں پڑ جائے تو اسکی خیر نہیں۔ انھیں ذرا ٹھنڈا رہنا چاہیئے۔
اورنگزیب میں یہ تمام عادات موجود تھیں۔


اپنے تاثرات بیان کریں !